یارن کی قلت کے باعث ویلیو ایڈڈ ٹیکسٹائل سیکٹر شدید مشکلات کا شکار۔فیصل آباد کے صعنت کار پریشان

فیصل آباد(اے پی این اے+ محمد تبسم)
یارن کی قلت کے باعث ویلیو ایڈڈ ٹیکسٹائل سیکٹر شدید مشکلات کا شکار۔
عبدالرزاق داؤد وزیراعظم کے مشیر برائے کامرس، ٹیکسٹائل و انویسٹمنٹ واہگہ بارڈر سے کاٹن اور یارن کی امپورٹ کی اجازت دینے کی یقین دہانی کے باوجود ابھی تک کوئی نوٹیفیکیشن جاری نہیں کیا گیا۔
حکومت صدارتی آرڈینینس کے ذریعے کاٹن یارن کی امپورٹ پر تمام ڈیوٹیز کا خاتمہ کرے۔
خام مال کی عدم دستیابی سے حکومت کا ٹیکسٹائل سیکٹر کو دی گئی مراعات بے سود و بیکار ثابت ہوسکتی ہیں۔
ان مسائل کی وجہ سے پاکستان کی جنوری کی ایکسپورٹ میں پچھلے سال جنوری کے مقابلے میں 10%کم ہوچکی ہے۔
عنقریب پا کستان کے تمام ایسو سی ایشنز کے چیئرمینوں و تاجر تنظیموں سے مشاورت کے بعداحتجاج کی کال دے دی جائے گی۔
میاں فرخ اقبال، سینئر وائس چیئرمین پاکستان ہوزری مینوفیکچررز اینڈ ایکسپورٹرز ایسوسی ایشن (نارتھ زون) و تمام ویلیو ایڈڈ ٹیکسٹائل ایسو سی ایشن کے چیئرمینوں کا پریس کانفرنس کے دوران مشترکہ اعلامیہ۔
اگر عبدالرزاق داؤد صاحب اپنے ذمہ داریاں احسن طریقے سے انجام نہیں دے سکتے تو ان کو فوری طور پر Resignکر دینا چاہیے۔ میاں نعیم احمدسابق چیئرمین پی ایچ ایم اے۔

APNA News

پاکستان میں پیدا ہونے والا کاٹن یارن کا بحران ویلیو ایڈڈ ٹیکسٹائل سیکٹر کیلئے کرونا سے بڑا خطرہ ثابت ہوگااگر حکومت نے ہنگامی بنیادوں پر اس مسئلے کو حل نہ کیا تو آنے والے چند ہفتوں میں ہماری ایکسپورٹ50%سے بھی کم ہوجائیگی یہ بات میاں فرخ اقبال، سینئر وائس چیئرمین پاکستان ہوزری مینوفیکچررز اینڈ ایکسپورٹرز ایسوسی ایشن نے آج ایسوسی ایشن کے دفتر میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہی جس میں گروپ لیڈر چوہدری سلامت علیPHMAِِ، محمد احمد چیئرمین (PTEA)،چوہدری محمد نوازچیئرمین کاٹن پاور لوم ایسوسی ایشن، وحید خالق رامے چیئرمین لوم اونرز ایسوسی ایشن،عارف احسان ملک سابق چیئرمین (APBUMA)، چوہدری طلعت محمود سینئر نائب صدر (FCCI) رانا طالب حسین سابق چیئرمین سائزنگ ایسوسی ایشن، میانں نعیم احمد سابق چیئرمین (PHMA) محمد امجد خواجہ سابق چیئرمین (PHMA)، میاں کاشف ضیاء سابق سینئر وائس چیئرمین (PHMA) حافظ راشد محمود ایگزیکٹو ممبر (PHMA)،میاں آصف اقبال ڈائریکٹر کوزی انٹرنیشنل دیگر صنعتکاروں، تاجروں اور پی ایچ ایم اے کے ایگزیکٹو ممبران نے بھی شرکت کی۔
انہوں نے وزیر اعظم پاکستان عمران خان اور اس کی ٹیم کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہاکہ جنہوں نے کرونا وباہ کے دوران نہ صرف ہمارے ریفنڈز DDTوغیرہ جاری کئے بلکہ Lock Down میں ہمیں خصوصی اجازت نامے پر اپنے ایکسپورٹ آرڈرز مکمل کرنے کی بھی اجازت دی۔ مگر دوسری طرف میں اپنے ورکرز اور ملز مالکان کو بھی خراج تحسین پیش کرتا ہوں کہ جہاں کرونا وباہ کی وجہ سے دنیا بھر کی مارکیٹیں بند ہونے جارہی تھی اور ہمارے ملک میں بھی تمام حکومتی اور نجی تقاریب پر پابندی لگائی گئی مگر ایسے حالات میں ہم اور ہمارے ورکرز نے تمام SOP’sکو Followکرتے ہوئے اپنی جان ہتھیلی پر رکھ کر ملک کو مالی مشکلات سے نکالا بلکہ اپنے ملک کیلئے کثیر زر مبادلہ کمانے کا بھی سبب بنے انہوں نے کہا کہ افسوس یہ ہے کہ ہم پچھلے 4ماہ سے یارن کی عدم دستیابی کا مسئلہ بارہا دفعہ وزیر اعظم کے مشیر برائے تجارت عبد الرزاق داؤد سے ہرZoom میٹنگ میں کر چکے ہیں مگر سوائے یقین دہانی کے
1۔ نہ تویارن کی Import پر5%کسٹم ڈیوٹی ختم کی گئی۔
2۔ نہ ہی ہمارے مطالبے پر یارن کی Export پر پابندی لگائی گئی۔
3۔ اور نہ ہی ابھی تک واہگہ بارڈر سے کاٹن اور یارن کیImportکی اجازت دی گئی۔
4۔ حکومت صدارتی آرڈینینس کے ذریعے کاٹن یارن کی امپورٹ پر تمام ڈیوٹیز کا خاتمہ کرے۔
انہوں نے کہا کہ عبدالرزاق داؤد نے اس مسئلے پر U-turnلیتے ہوئے اس بات کا علان کیا کہ خام کپاس بھارت سے نہیں خریدیں گے بلکہ افغانستان اور ازبکستان سے مئی کے مہینے سے اس کی تجارت شروع کر دی جائے گی۔
میاں فرخ نے کہا کہ اس بیان سے لگتا ہے کہ وہ یارن بیچنے والوں کو 4ماہ کی مزید مہلت دے رہے ہیں تاکہ وہ اپنی مرضی کا ریٹ لگا کر مارکیٹ کو Hijackکر لیں۔
چوہدری سلامت صاحب گروپ لیڈر (PHMA) نے کہا کہ کاٹن کی قیمتیں اتنی نہیں بڑھی جتنی کہ یارن کی کی قیمتیں بڑھ رہی ہیں جس میں بنیادی کردار مافیا ادا کررہا ہے انہوں نے کہا کہ حکومت کو چاہیے کہ ان کے خلاف فوری ایکشن لے اور ان کے گوداموں میں پڑا ہوا مال سیل کیا جائے انہوں نے کہا کہ پاکستان میں یارن کی قیمت ویتنام اور بنگلہ دیش سے 5000 روپے فی بورا مہنگا فروخت ہورہا ہے۔
محمد احمدچیئرمین (PTEA)نے کہا کہ اس مصنوعی قلت کو روکنے کیلئے واہگہ بارڈر سے یارن کی امپورٹ کی اجازت دی جائے اور فوری طور پر کاٹن کی پیداوار بڑھانے کیلئے لائحہ عمل بنایا جائے تاکہ آئندہ سال ہمیں یہ مسئلہ درپیش نہ ہو۔
چوہدری طلعت محمود سینئر نائب صدر (FCCI) نے کہا کہ پی ایچ ایم اے و دیگر تمام تنظیمیں جب بھی احتجاج کی کال دے گی چیمبر فیصل آباد انکا بھر پور ساتھ دے گی بلکہ ان کے شانہ بہ شانہ کھڑے ہو گا۔
عارف احسان ملک سابق چیئرمین (APBUMA) نے کہا کہ یارن کے بحران کی وجہ سے ہمارا SME’sسیکٹر بھی شدید مشکلات کا شکار ہے۔اور اب یہ وقت کا تقاضہ ہے کہ فوری احتجاج کی کال دیکر ایوان ِبالا تک اپنی آواز پہنچائی جائے۔
وحید خالق رامے چیئرمین لوم اونرز ایسوسی ایشن اور چوہدری محمد نواز چیئرمین کاٹن پاور لوم ایسوسی ایشن نے کہا کہ پاکستان مافیا کیلئے جنت ہے انہوں نے کہا کہ خدارا یسے مافیا کا محاسبہ کر کے ان سے چھٹکارہ دلایا جائے۔
میاں نعیم احمد سابق چیئرمین پی ایچ ایم اے نے کہا کہ یہ اس ملک کا المیہ ہے کہ یہا مسائل کا واحد حل احتجاج اور سڑکوں پر نکل کر ہی حل ہوتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم بہت جلد تمام ایسوسی ایشن کے چیئرمینوں سے مشاورت کے بعداحتجاج کی کال دیں گے تاکہ ہمارا یہ مسئلہ بھی حل کیا جاسکے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اگر عبدالرزاق داؤد صاحب اپنے ذمہ داریاں احسن طریقے سے انجام نہیں دے سکتے تو ان کو فوری طور پر Resignکر دینا چاہیے۔
رانا طالب حسین سابق چیئرمین سائزنگ ایسو سی ایشن نے سخت الفاظ میں مزمت کرتے ہوئے کہاکہ مافیا یارن کی قیمتیں بڑھانے میں پوری طرح ملوث ہے اور حکومت کو فوری طور پر اس کا سدِباب کرنا ہوگا۔
آخر میں میاں فرخ اقبال سینئر وائس چیئرمین نے مشترکہ اعلامیہ جاری کرتے ہوئے کہا کہ عنقریب پاکستان کے تمام ایسوسی ایشنز کے چیئرمینوں و تاجر تنظیموں سے مشاورت کے بعد احتجاج کی کال دے دی جائے گی اور پورے ملک کو یک زبان ہو کر نہ صرف مالکان بلکہ مزدور بھی سڑکوں پر ہونگے اور حکومت سے یہ طوفان روکنا ممکن نہ ہوگا۔

100% LikesVS
0% Dislikes

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

ur Urdu
X
براہ راست